احساس ایمرجنسی کیش پروگرام کیا ہے؟

اہم حصے
  • پروگرام کا کل بجٹ اور مسحقین کی تعداد
  • احساس ایس ایم ایس مہم
  • مسحقین کی اہلیت کا معیار کیا ہوگا؟
  • رقم کی ترسیل کا طریقہ کار


حکومت پاکستان کی جانب سے احساس ایمرجنسی کیش پروگرام ان ضرورت مند افرادکی مالی معاونت کے لئے مرتبکیاگیا ہے جن کے معاشی حالات کرونا وائرس کی وجہ سے بر ی طرح متاثرہوئے ہیں۔ ان متاثر ین میں د یہاڑی دار افراد اور مزدور سر فہرست ہیں جو کہ حفاظتی اقدامات کےباعث گھروں میں محصور ہو کر ره گئے ہیں اور اپنے گھر والوں کے لئے دو وقت کی روٹی بھی نہیں کما پا رہے۔علاوه ازیں نوکریوں کی بندش کی وجہ سے بھی بہت سے افراد خط غربت سےنیچے چلے گئے ہیں۔ اس صورتحال کے پیش نظر احساس ایمرجنسی کیش پروگرام کواس طرحتشکیل د یا گیا ہے کہ مستحقین کواحساس کے موجوده ڈجیٹل ادائگیوں کے نظام کےتحت فور یاور آسان طر یقے سے امداد ی رقم منتقل کی جا سکے۔

پروگرام کا کل بجٹ اور مسحقین کی تعداد

ایک کروڑ بیس لاکھ خاندان، 12000روپے فی خاندان، کل بجٹ 144 ارب روپے

احساس ایس ایم ایس مہم

مستحق افراد کی نشاندہی کا آغازایس ای م ا یس مہم کے ذریعے کیا جائے گا۔ جامع و موثر تشہیر ی مہم کے ذریعے شہر یوں کو مطلع کیا جائے گا کہ وه8171 پرایس ایم ایس بھیج کر پروگرام میں شامل ہونے کےلئے اپنی اہلیت کو جانچ سکیں ۔ اہل افراد کو بذریعہ SMS رقم وصول کرنے کی اطلاع کر د ی جائے گی اور جن افراد کے کوائف کی تصد یق قومی سماجی ومعاشی سروے کے اعداد و شمارسے نہ ہو سکے گی ان کو ضلعی انتظامیہ سے رابطہ کرنے کو کہا جائے گا۔

مسحقین کی اہلیت کا معیار کیا ہوگا؟

درجہ اول: کفالت پروگرام کے 45 لاکھ موجوده صارفین کو ماہانہ 2000 روپے وظیفے کے ساتھ ساتھ اگلے چار ماه کے لئے 1000 روپے کی اضافی رقم د ی جائے گی ۔ اس طرح انکو چار ماه کی رقم 12000 روپے یک مشت ادا کر د ی جائے گی۔
درجہ دوئم: 75 لاکھ د یگر مستحق ین کو 12000 روپے یک مشت ادا کیے جائیں گے۔ اس درجہ بند ی کے تحت دوطرح سے ضرورت مند افراد کی نشاندہی کی جائے گی۔
درجہ دوئم (الف): وه مستحقین جن کی شناخت قومی سماجی و معاشی سروے کی بنیاد پر کی جائے
گی۔
درجہ دوئم (ب): وه افراد جو اس سروے میں شامل نہیں ہیں اور وه جو اس سروےمیں شامل نہیں تھےان کے کوائف تصد یق کے لیے متعلقہ ضلعوں کو بھجوائیں گے۔ ضلع ی انتظامیہ کو یہ سہولت د ی جائے گی کہ وه اس تصد یقی عمل میں درخواست گزار افراد کے کوائف کا اندراج کرسکیں۔ اندازا چالیس لاکھ افراد قومی سماجی و خوشحالی سروے کے اعدادو شمار کے ذریعے اور 35 لاکھافراد ضلعی انتظامیہ کے تعاون سے شامل کیے جائیں گے۔
مستحقین کی نشاندہی کے اس تمام عمل میں نادرا کی مدد سے اعداد و شمار و کوائف کا تفصیلی جائزه لیا جائے گا تاکہ شفافیت کو یقینی بنایا جاسکے اور کوئی غیر مستحق شخص پروگرام سےمستفید نہ ہو سکے۔
یہ بھی پڑھیے

احساس راشن پروگرام پر راشن لینے کے لئے معلومات

رقم کی ترسیل کا طریقہ کار

نادرا اور ب ینکوں کے تعاون سے تمام ادائیگیاں بائیومیٹرک تصد یق پر مبنی نظام کے ذر یعے کی جائیں گی۔ مستحقین نامزد بینکوں کے پوائنٹ آف سیل مراکز سے اپنی رقم وصول کر سکیں گے۔مستحقین کی تعداد میں اضافے کے پیش نظر صوبائی حکومتیں اس امر کو یقینی بنائیں گی کہ ادائیگیوں کے انتظامات کشاده مقامات پر کیے جائیں اورموجوده ادائیگی مراکز کو کھلا رہنے کی اجازت ہو اور ان مقامات پر کرونا سے بچاو ی ممکنہ تدابیر کیلیے اقدامات کی جائیں۔
تشہیری مہم میں اس بات کو بھرپور طر یقے سے واضع کیا جائے گا کہ یہ ایک مرتبہ د ی جانےوالی امداد ان افراد کیلیے ہے جو کرونا وبا سے بری طرح معاشی طور پر متاثر ہوئے ہیں۔ اس بات کا بھرپور خیال رکھا جائے گا کہ اس امداد سے حقیقی ضرورتمند ہ مستفید ہوں۔

مزید تفصیلات ڈاکٹر ثانیہ نشتر کی زبانی سنیے

2 Comments

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Social Media Auto Publish Powered By : XYZScripts.com
Close